Sep 30, 2008

علامہ اقبال کی ایک فارسی نظم - انقلاب

زبورِ عجم سے انقلاب کے موضوع پر علامہ کی ایک فکر انگیز نظم:
خواجہ از خونِ رگِ مزدور سازَد لعلِ ناب
از جفائے دہ خدایاں کشتِ دہقاناں خراب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
سرمایہ دار مزدور کی رگوں کے خون سے خالص لعل بنا رہا ہے اور دیہی خدا/جاگیردار کے ظلم سے کسانوں کے کھیت اجڑ گئے ہیں۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو۔

شیخِ شہر از رشتۂ تسبیح صد مومن بَدَام
کافرانِ سادہ دل را برہَمَن زنّار تاب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
شہر کے عالم نے تسبیح کے دھاگے سے سینکڑوں مومن باندھے ہوئے ہیں۔ سادہ دل کافروں کیلیے برہمن زنار بنا ہے۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو

میر و سلطاں نرد باز و کعبتینِ شان دغل
جانِ محکوماں ز تن بُردَند و محکوماں بخواب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
میر اور سلطان چوسر کھیلنے والے ہیں اور بھی ایسی جسکے پانسے دغل ہیں کہ ہر دفع وہ ہی جیتیں۔ وہ محکوموں کی جان تن سے کھینچ لیتے ہیں اور محکوم خواب میں ہیں۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو

واعظ اندر مسجد و فرزندِ اُو در مدرسہ
آں بہ پیری کودکے، ایں پیر در عہدِ شباب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
واعظ تو مسجد میں ہے اور اسکا بیٹا جدید مدرسے میں۔ وہ بزرگی میں بچہ بنا ہوا ہے اور یہ عین جوانی کے عالم میں بوڑھا ہوگیا ہے۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو

اے مسلماناں فغاں از فتنہ ہائے علم و فن
اہرَمَن اندر جہاں ارزان و یزداں دیر یاب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
اے مسلمانو، علم و فنون کے فتنوں سے فریاد کرو کہ شیطان تو جہان میں عام ہوگیا ہے اور خدا مشکل سے ملنے والا۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو

شوخیٔ باطل نِگَر، اندر کمینِ حق نشست
شپّرازِ کوری شب خونے زَنَد بر آفتاب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
باطل کی شوخی تو دیکھ کہ حق کی گھات میں لگا ہوا ہے۔ دن کی اندھی چمگادڑ سورج پر شب خون مار رہی ہے۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو

Persian poetry, Persian Poetry with Urdu translation, Farsi poetry, Farsi poetry with urdu translation, Allama Iqbal, علامہ اقبال
علامہ محمد اقبال, Allama Muhammad Iqbal
در کلیسا ابنِ مریم را بدار آویختَند
مُصطفٰی از کعبہ ہجرت کردہ با اُمّ الکتاب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
عیسائیوں نے کلیسا میں ابنِ مریم کو سولی پر چڑھا دیا ہے۔ اور محمد (ص) کو کعبہ سے قرآن کے ساتھ ہجرت کرنی پڑی۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو

من درونِ شیشہ ہائے عصرِ حاضر دیدہ ام
آنچناں زہرے کہ از وے مارہا در پیچ و تاب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
میں نے موجودہ زمانے کے پیالوں میں دیکھا ہے وہ زہر کہ اس کی وجہ سے زہریلے سانپ بھی تڑپ رہے ہیں۔الٹا ڈالو،بدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو

با ضعیفاں گاہ نیروے پلنگاں می دہند
شعلۂ شاید بروں آید ز فانوسِ حباب
انقلاب
انقلاب، اے انقلاب

ترجمہ
باز دفعہ کمزوروں کو شیروں کا جسم و طاقت مل جاتی ہے۔ شاید پانی کے بلبلوں سے شعلہ برآمد ہو جائے۔الٹا ڈالوبدل ڈالو، سب کچھ بدل ڈالو۔

متعلقہ تحاریر : اقبالیات, زبور عجم, علامہ اقبال, فارسی شاعری

0 تبصرے:

:)) ;)) ;;) :D ;) :p :(( :) :( :X =(( :-o :-/ :-* :| 8-} :)] ~x( :-t b-( :-L x( =))

Post a Comment

اس بلاگ پر اردو میں لکھے گئے تبصروں کو دل و جان سے پسند کیا جاتا ہے، اگر آپ کے پاس اردو لکھنے کیلیے فونیٹک یا کوئی دیگر اردو 'کی بورڈ' نہیں ہے تو آپ اردو میں تبصرہ لکھنے کیلیے ذیل کے اردو ایڈیٹر (سبز رنگ کے خانے) میں تبصرہ لکھ کر اسے نیچے والے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں، اردو ایڈیٹر لوڈ ہونے میں کچھ وقت لگ سکتا ہے جس کیلیے آپ سے معذرت۔ اردو ایڈیٹر بشکریہ نبیل حسن نقوی۔